Pakistan latest updates, breaking news, news in urdu

پائلٹوں کے مشکوک لائسنسوں پراپوزیشن کا واویلابلاجواز

سلیم صدیقی نیویارک سے

281
Spread the love

مارا معاشرہ بھی بڑے عجیب مزاج کا ہے قومی ائیرلائن اور دیگر نجی ائیرلائنز میں جعلی ڈگریوں کا معاملہ کافی عرصے سے زیر بحث تھا اور سپریم کورٹ نے اس پر کافی سخت احکامات جاری کئے تھے جنکی روشنی میں حکومت نے تحقیقات شروع کی تھیں تاہم کراچی ائیرپورٹ کے قریب ائیر بس کے حادثے کے بعد کمیشن قائم کیا گیا جسکی روشنی میں حکومت نے سخت اقدامات اٹھائے اور جرات کا مظاہرہ کرتے ہوئے جعلی ڈگریوں اور لائسنسوں والے پائلٹوں کو ملازمت سے فارغ کرنا شروع کردیا جس پر اپوزیشن نے واویلا کرنا شروع کردیا یہ وہی اپوزیشن ہے جس نے اپنے دور اقتدار میں ان کو بھرتی کرکے ملک وقوم کی رسوائی کا سامان کیا اور اب حکومت کو لتاڑ رہی ہے کیا جعلی دستاویزات کا معاملہ پائلٹوں تک ہی محدود ہے البتہ پائلٹوں پر انسانی زندگیوں کا دارومدار ہوتا ہے اس لئے زیادہ ہائی لائٹ ہو گیا ہے سابقہ حکومتوں کی بداعمالیوں کا سارا ملبہ موجودہ حکمرانوں پر ڈالنے کی کوشش کی جارہی ہے مگر اسمبلیوں میں بیٹھے ایسی ہی ڈگریوں کے حامل ارکان کے بارے میں کوئی لب کشائی نہیں کررہا عزیر بلوچ جو لیاری میں دہشت کی علامت سمجھے جاتے تھے دوسو کے قریب قتل کئے تھے اور یہ انکشافات ایک جے آئی ٹی رپورٹ میں کئے گئے تھے جو سول اور فوجی افسران پر مشتمل کمیٹی نے تحقیقات کے بعد جاری کئے لیکن حسب معمول دبادئے گئے مگر عدالتی احکامات کے بعد سندھ حکومت نے ادھوری رپورٹ جاری کی دوسری جانب وفاقی وزیر علی زیدی نے مکمل رپورٹ پبلک کردی جس میں زرداری اور انکی پارٹی پر عزیر بلوچ کی سرپرستی کا الزام لگایا ہے آصف زرداری ہماری سیاست کا وہ بدقسمت کردار ہے جو اقتدار کے ایوانوں میں قدم رکھتے ہی آلودہ ہو چکا تھا پی پی پی کے پہلے دور اقتدار میں ماحولیات کی وزارت سنبھالتے ہی کرپشن کے چرچے شروع ہو گئے تھے ایک برطانوی شہری بخاری کی ٹانگ سے بم باندھ کر ان سے لاکھوں پانڈ وصول کرنے کا بڑے عرصے تک چرچا رہا پورے کراچی کی مہنگی زمینوں پر قبضے اور بلاول ہاس کی تعمیر میں ناجائز دبا کے ذریعے زمین ہتھیانے کا الزام بھی دستاویزات میں موجود ہے مگر جادوگری کے ذریعے عدالتوں سے ریلیف لے لیا جاتا ہے اور عوام میں یہ تاثر دیتے ہیں کہ وہ معصوم اور پاک صاف ہیں زرداری دور حکومت میں میں نے خود کئی ایسے منصوبے بے نقاب کئے جو اگر کامیاب ہو جاتے تو پاکستان کو اربوں کا نقصان ہوتا روزویلٹ ہوٹل ہتھیانے کا ایک منصوبہ اس وقت ناکام بنایا جب انکے وزیر خزانہ اسے ٹھکانے لگانے نیویارک پہنچ چکے تھے مگر اس ناچیز کی حقیر کوشش سے وہ ہوٹل ابھی تک محفوظ ہے اس حکومت میں بھی کچھ عناصر اس پر جھپٹنے کو تیار بیٹھے ہیں سازشیں بھی کرتے رہتے ہیں مگر وہ کامیاب نہیں ہو پاتے عدالتی نااہلیوں اور بوسیدہ نظام کی بدولت کرپٹ لٹیرے دندناتے گھوم رہے ہیں اور انکا سب سے بڑے اور ملک دشمن محافظ وہ عناصر ہیں جو میڈیا پر قابض ہیں جو انہیں تحفظ دیتے ہیں اور انکا امیج ایسا بناتے ہیں جیسے اس ملک کے ان داتا ہوں دونوں جماعتوں مسلم لیگ بشمول ق لیگ اور پی پی پی اور مولانا کی شریعتی چھتری نے ملک کو کنگال کرکے دنیا بھر میں رسوا کردیا ہے اور اسمبلیوں میں براجمان ہیں نہ مجرموں کو کیفر کردار تک پہنچاتے ہیں نہ ہی قانون سازی ہونے دیتے ہیں تاکہ بروقت انصاف ہو اگر انصاف کی کوئی کرن نظر آتی ہے تو کالے کوٹوں والے آگے بڑھ کر اس میں رکاوٹیں ڈال دیتے ہیں ایسے میں اگر جعلی لائسنسوں والے پائلٹ مجرم ہیں تو قومی وسائل پر قابض اور لٹیروں کو تحفظ دینے والے اصلاحات میں رکاوٹیں ڈالنے والے یا بڑے بڑے ڈاکٹرز دواساز ادارے ملاوٹ کرنے والے غرضیکہ معاشرے کا ہر طبقہ اپنی جگہ وہ پائلٹ ہیں جو تباہی کا باعث بن رہے ہیں وقت آگیا ہے کہ جرات اور ہمت سے کام لیکر ان تمام ناسوروں سے چھٹکارا حاصل کیا جائے۔