Official Web

توشہ خانہ کی بہتی گنگا میں کس کس حکمران نے اشنان کیا، تفصیلات مل گئیں

وہ کون سا سابق وزیراعظم جو انتہائی قیمتی قالین صرف 50 روپے میں لے اڑا

735
Spread the love

پاکستان جیسے ترقی پذیر ملکوں کے حکمرانوں کی طرف سے قومی خزانہ لوٹنے کی خبریں کوئی نئی بات نہیں ہے بلکہ اب تو پاکستان کے حکمرانوں نے قومی خزانہ لوٹنا اپنا استحقاق سمجھ لیا ہے۔ سابق وزیراعظم عمران خان کے بیرون ملک سے تحفہ میں ملنے والی گھڑی اور بعض دیگر چیزیں توشہ خانہ سے معمولی قیمت پر لیکر فروخت کرنے کے چرچے آج کل الیکٹراک میڈیا کے ساتھ ساتھ سوشل میڈیا پر چھائے ہوئے ہیں۔ لیکن توشہ خانہ کی بہتی گنگا سے اشنان کرنے میں پاکستان کا کوئی بھی سابق حکمران محروم نہیں رہا۔ ان میں سابق صدر آصف علی زرداری،سابق وزیراعظم نواز شریف، سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی،سابق صدر پرویز مشرف اور سابق ‘‘امپورٹڈ’’ وزیر اعظم شوکت عزیز شامل ہیں۔

سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی نے تو ترک صدر کی اہلیہ کی طرف سے زلزلہ متاثرین کو ملنےوالا ہار بھی ہتھیا کر اپنی اہلیہ کو دیدیا تھا۔

قومی احتساب بیورو نیب نےسابق صدور اور وزرائے اعظم کی طرف سے توشہ خانہ سے حاصل کردہ تحائف کا ریکارڈ حاصل کر کے تحقیقات شروع کر دی ہیں اور سابق ‘‘ امپورٹڈ’’ وزیراعظم شوکت کے خلاف جنہوں نے توشہ خانہ کو سب سے زیادہ لوٹا، ریفرنس دائر کرنے کی تیاریاں بھی شروع کر دی ہیں۔

شوکت عزیز نے توشہ خانہ سے 25 کروڑ مالیت کے 11 سو تحائف صرف اڑھائی کروڑ میں خرید کر لندن ،دبئی اور امریکہ میں اپنے گھروں کی زینت بنائے۔

سابق صدر آصف علی زرداری نے معمر قذافی اورمتحدہ عرب امارات کے حکمرانوں کی طرف سے ملنے والی تین گاڑیوں سمیت 14 کروڑ ،مالیت کے دیگر تحائف صرف 2 کروڑ 10 لاکھ ادائیگی کرکے حاصل کئے جبکہ 120 تحائف مفت لے گئے۔

سابق وزیراعظم نواز شریف نے پہلے دور حکومت میں توشہ خانہ سے 67 لاکھ سے زیادہ مالیت کے تحائف صرف9 لاکھ میں حاصل کئے۔ جلاوطنی کے بعد سعودی عرب سے ملنے والی 42 لاکھ سے زیادہ مالیت کی مرسڈیز گاڑی صرف 6 لاکھ 36 ہزار میں لے لی۔ انہوں نے قازخستان سے ملنے والا انتہائی قیمتی قالین سرکاری خزانے میں صرف 50 روپے جمع کرا کے لے لیا اس کے علاوہ دیگر اور بے شمار تحائف بھی اونے پونے حاصل کیے۔

سابق آمر صدر پرویز مشرف نے پونے چار کروڑ کے تحائف صرف 55 لاکھ کی ادائیگی کرکے اپنے پاس رکھ لئے۔