Official Web

اعظم خان،طارق ہدا،جاوید آفریدی کی اربوں کی کرپشن،ہوشربا داستان سامنے آگئی

سابق پرنسپل سیکرٹری کی سرپرستی میں ممبرکسٹم اور جی ایم موٹرز کے مالک نے اربوں کا ٹیکس بچایا

1,374
Spread the love

اسلام آباد:پاکستان تحریک انصاف کے سابق دور حکومت میں اربوں روپے کے غبن کی ایک اور کہانی منظرعام پر آگئی، سابق پرنسپل سیکرٹری اعظم خان ،ممبر کسٹم طارق ہدا اور ایم جی آٹو موبائلز کے مالک جاوید آفریدی نے اربوں روپے کی لوٹ مار کی۔

باوثوق ذرائع کے مطابق سال 2021 میں ایم جی آٹو موبائلز  نے دس ہزار سے زیادہ گاڑیاں درآمد کیں اور طارق ہدا ممبر کسٹم کی مدد سے اربوں روپے کی کسٹم ڈیوٹی کا فراڈ کیا۔ گاڑی کی قیمت CKD Kits سے بھی کم ظاہر کی گئی۔ CKD Kit 16000 ڈالر میں اور پوری گاڑی 11000 سے 13000ڈالر میں کلیئر کی گئی۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ کچھ کسٹم آفسران نے اس پر اعتراض آٹھایا تو طارق ہدا نے ان کا فورا تبادلہ کر دیا۔

ذرائع کے مطابق اعظم خان،  طارق ہدا  اور جاوید آفریدی مبینہ طور پر اسلام آباد میں رنگین شامیں اکٹھے گزارنے کے عادی ہیں۔ایوب آفریدی جو جاوید آفریدی کے آنکل ہیں کو سینٹ کی سیٹ سے استعفی دلوا کر اس سیٹ پر شوکت ترین کو سینٹر بنوایا گیا اور

پرنسپل سیکرٹری اعظم خان اور وزیر خزانہ کی سرپرستی کی وجہ سے طارق ہدا نے لوٹ مار کا بازار گرم کیے رکھا۔

20 اپریل 2022 کو وزیر دفاع خواجہ آصف نے اس معاملے کو پبلک اکاؤنٹس کمیٹی میں اٹھایا اور چیرمین ایف بی آر کو تفتیش کرکے ایک مہینے میں رپورٹ پیش کرنے کا کہا۔چیرمین نے اب چار ارکان پہ مشتمل کمیٹی تشکیل دی ہے جو اس معاملے کی چھان بین کرے اور اربوں روپے کے فراڈ میں ملوث ذمہ دارن کا تعین کرے۔

چیرمین نے حکم جاری کیا ہے کہ ایڈجوڈیکیشن پروسیڈنگ جو کہ پہلے بھی ہو چکی ہے کہ کو دوبارہ کھولا جائے، چار رکنی کمیٹی کو آرڈر جاری کیا گیا ہے کہ اپنی رپورٹ 15 مئی تک پیش کرے۔

 یاد رہے کہ ایڈجوڈیکیشن پروسیڈنگ کا پہلہ فیصلہ ایم جی آٹو موبائلز کے حق میں کیا گیا کیونکہ کلیکٹر ایڈجوڈیکیشن پہ طارق ہدا کا دباؤ تھا۔

دوسری طرف اعلیٰ سطح کے پرمووشن بورڈ کا اجلاس 26 اپریل کو ہونا طے ہے جس میں طارق کو ترقی دے کر22 ویں گریڈ میں ترقی دیئے جانے کا امکان ہے۔