Pakistan latest updates, breaking news, news in urdu

آرمی چیف اور چیرمین جواینٹ سٹاف کی تقری کا فیصلہ خوش آیند

مدینتہ اولالیا سے /اعجازترین

71
Spread the love

آرمی چیف اور چیرمین جوائنٹ چیف آف سٹاف کی تقرری پر وزیراعظم شہباز شریف نے تمام اتحادی جماعتوں کو اعتماد میں لے کر حتمی فیصلہ کر کے سمری صدر کو بھجوائی دی ہے تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نیازی نے گذشتہ روز ایک نجی ٹی وی چینل کو انٹرویو کے دوران کہا کہ صدر عارف علوی سے رابطہ ہے اب ہم آئیں کے اندر رہ کر کھلیں گے اھر آئین میں رہتے ہوئے

عمران خان نیازی نے ان تعیانتیوں میں روڑے اٹکانے کی کوششیں کیں تو پھر حکومت بھی ائین کے اندر رہ کر صدر کے لئے بہت کچھ کھیل کرے گی اور اس عمرانی کھیل میں صدر عارف علوی کو گھر بھی جا سکتے ہیں بہتر ہے کہ صدر عارف علوی کسی جماعت کے کارکن بیننے کی بجائے اسلامی جمہوریہ پاکستان کے صدر کی حثیت سے وزیر اعظم شہبازشریف کے آئینی حق کو مانتے ہوئے ان اہم تقرریوں رخنہ نہ ڈالیں عارف علوی چونکہ اس وقت مملکت خداد پاکستان کے صدر ہیں اس لئے انہیں ملک کے مفاد آئیں و قانون کو مقدم رکھنا ہو گا ممتاز قانون دان شہزاد سلیم خان ملیزئی ایڈووکیٹ کا کہنا ہے کہ عمران خان کے سیاسی غبارے سے ہوا نکل چکی ہے

سارے اتحادی ایک بیج پر ہیں وزیر اعظم شہبازشریف کی بھجوائی ہوئی سمری پر ہی صدر عارف علوی دستخط کریں گے عارف علوی کی لاھور یاترا بے کار جائے گی اور عمران خان نیازی اس تقرری میں روکاوٹ ڈالنے کی جرات نہیں کر سکیں گے ایسا کرنا عمران خان کا خواب ہی رہے گا ایسے جواب دیکھنے پر پابندی نہیں ہے وہ حسرت سے ایسے خواب دیکھیں جو کبھی پورے نہیں ہوں گے البتہ آنے والا الیکشن عمران خان نیازی کے لئے ایک مشکل الیکشن ہو گا اب نہ تو آر ٹی ایس فیل ہو گا اور نہ ہی عمران خان نیازی کو ادھر ادھر سے کوئی سپورٹ ملے گی اب تو انہیں اپنی کارکردگی پر جو صفر ہے پرالیکشن لڑنا پڑے گا

یہ ان کی خام خیالی ہے کہ وہ آینئدہ الیکشن میں کامیابی حاصل کرلیں گے جلسے کرنا ریلیاں نکالنا آسان ہے الیکشن لڑنا آسان نہیں عمران خان نیازی کو اپنے طرز سیاست کو تبدیل کرنا ہوگا عمران خان نیازی نے اپنے سیاسی مخالفین کے خلاف جھوٹے مقدمات قائم کرکے آور جھوٹا پروپیگنڈہ کرکے بہت چورن بیچ لیا اب مذید یہ چورن بکنے والا نہیں گمنڈ غرور تکبر عمران خان نیازی کو لے ڈوبا کیونکہ کپتان یہ سمجھنے لگا کہ وہ قاہد اعظم محمد علی جناح اور ذوالفقار علی بھٹو سے بھی زیادہ پاپولر لیڈر ہوں مگر ایسی کوئی بات نہیں یہ ان کی خام خیالی ہے عمران خان نیازی جن بیساکھیوں کے سہارے آیا تھا

انہیں اب وہ بیساکھیاں میسر نہیں ہوں گی نہ ہی آنے والا الیکشن 2018کی طرز کا الیکشن ہو گا 2023 کے الیکشن میں عوام کے مینڈیٹ کا احترام کیا جائے گا اب کپتان اس عوامی مینڈیٹ کو چرا نہیں سکیں گے پیپلزپارٹی جنوبی پنجاب کے سینئر نائب صدر خواجہ رضوان عالم کہتے ہیں کہ عمران خان نے اقتدار کے لئے افواج پاکستان کے بارے مین جو کچھ کہا وہ ناقابل معافی ہے عدلیہ الیکشن کمیشن سمیت دیگر اداروں کونہ بخشا اقتدار سے محرومی کے بعد بہکی بہکی باتیں کرنے لگے ہیں کپتان اپنی سیاسی کشتی ڈبوبنے کا خود ذمہ دار ہے اپنے اقتدار کے دوران عمران خان نے عوام کے مساہل حل کرنے کی بجائے جھوٹ پر جھوٹ بول کر انہیں یوٹرن کہہ کر اپنے دل کو جھوٹی تسلی دیتا رہا مگر قوم نے اس کے عوام دشمن فیصلوں کو دیکھا پرکھا اور اسے مسترد کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے آیندہ الیکشن تحریک انصاف کی سیاسی موت ثابت ہو گا

شہزاد سلیم خان ملیزئی ایڈووکیٹ کالج کے زمانے سے سیاست میں متحرک ہیں وہ سیاست میں محترک اور گہری نظر رکھتے ہیں ان کی پشند گوئیوں کتنی سچی ثابت ہوں گی اس کا پتہ تو آنے والے الیکشن میں چلے گا لیکن ظاہری حالات شہزاد سلیم خان ملیزئی ایڈووکیٹ کے موقف کی تائید کرتے نظر آپ رہے ہیں جس میں تحریک انصاف کا سیاسی ٹائی ٹینک ڈوباتا ہوا نظر آ رہا ہے سیاسی حالات جو بھی ہوں سیاست دانوں کو جنرل قمر جاوید باوجوہ کی یہ بات پکے باندھ لینی چاہیے کہ عوام اپنے ووٹ کے ذریعے جو بھی فیصلہ کریں سب کو یہ دیصلہ قبول کرنا چاہیے جیتنے والوں کو عوام کی خدمت کے ساتھ ملک کی بہتری ترقی کے لئے کام کرنا چاہیے اور ہارنے والوں کو صدقہ دل سے قوم کے فیصلے کو مان کر آیندہ کے لئے عوامی رائے عامہ ہمورار کرکے آنے والے الیکشن کی تیاری کرنا چاہیے سیاست دان اپنی سیاسی لڑائی کو ذاتی لڑائی نہ بنائیں اور نہ ہی مذاکرات کے دروازے بمد کریں کیونکہ سیاست میں کوئی بات آخری نہیں ہوتی

آج کے حلیف کل کے حریف ہو سکتے ہیں اس لئے عمران خان نیازی کو اپنا رویہ سیاسی بنانا ہو گا روا داری لچک پیدا کرنا ہو گی ورنہ وہ ایک ناکام سیاست دان ہوں گے ،اللہ پاک ہمیں ملک و قوم کی خدمت کرنے آئین و قانون پر عمل کرنے اخوت محبت بھائی چارے اور برداشت کی توفیق دے آمین